بنیادی فزکس

baisc physics

فزکس میں ہم مادہ، انرجی، ا ور ان کے درمیان باہمی عمل کا مطالعہ کرتے ہیں۔

سائنس کا لفظ لاطینی زبان کے لفظ scientia  سے ماخوز ہے۔جس کا مفہوم ہے علم.

اٹھاریوں صدی سے پہلے مادی اجسام کے مختلف پہلوئوں کے مطالعہ کا نام Natural Philosophy تھا۔

علم میں وسعت کے بعد یہ دو بڑی شاخوں میں تقسیم ہو گیا۔اورنیچرل فلاسفی کو دو حصوں میں کنورٹ کیا گیا۔

  1. فزیکل سائنسز جو بے جان اشیا کے بارے میں علم دیتا ہے .
  2. بائیولوجیکل سائنسز جو جانداروں کے بار ے میں علم کا نام ہے۔

اٹامک فزکس

ایٹم اور اس کے ساخت کے خواص کا علم.

نیو کلیر فزکس

ایٹم کے نیوکلیائی اور اس میں موجود پارٹیکلز کے خواص کا طرزعمل

طبعی مقداریں Physical Quantities

تمام قابل پیمائش مقداروں کو کہتے ہیں۔ جس میں لمبائی، ماس، وقت اور ٹمپریچر شامل ہیں۔

بنیادی مقداریں Base Quantities

سات طبیعی مقداریں جو بنیادی  پیمائش کے لیے یوز ہوتی ہیں  جس میں SI سسٹم ٹیبل موجود ہے ۔

مقدارعلامتیونٹعلامت
لمبائیlمیٹرM
ماسmکلو گرامKg
وقتtسیکنڈs
الیکٹرک کرنٹiایمپیرA
روشنی کی شدتLکنڈیلاCd
ٹمپریچرTکیلونK
شے کی مقدارnمولmol

ماخود اکائیاںDerived Units

جو بنیادی اکائیوں سے ماخوز کی گئی ہیں ان کو

مقدارعلامتیونٹعلامت
سپیڈvمیٹر فی سیکنڈms-1
ایکسلریشنaمیٹر فی سیکنڈ میٹر فی سیکنڈms-2
والیومVکیوبک میٹرm3
فورسFنیوٹنN or kgms-1
پریشرPپاسکلPa or nm-2
ڈینسٹیpکلو گرام فی کیوبک میٹرKg m-3
الیکٹرک کرنٹQکولمبC or as

سائیٹیفیک نوٹیشن

384000000=384000000.0=3.84 x 10=اعشاریہ کے بعد کے اعداد کی تعداد گن کے لکھ دیں

0.00045=4.5×10-4

ڈیسی مل سے پہلے صرف ایک ہندسہ چھوڑ کر ۔ لگایا جاتا ہے

پیمائشی حالات Measuring Instruments

طبیعی مقداروں کی پیمائش کے لیے مختلف آلات

میٹر راڈ

لمبائی یا دو پوائنٹس کے درمیان فاصلہ کی پیمائش کے لیے استعمال ہوتی ہے۔  کم سے کم ریڈنگ ایک ملی میٹر ہے اس کو لیسٹ کائونٹ کہتے ہیں۔

پیمائشی فیتہ۔

ورنیئر کیلیپرز

میٹر راڈکی مدد سے پیمائش ایک ملی میٹر تک درست ہے ۔اس سے زیادہ کے لیے ورنیئر کیلیپراستعمال ہوتا ہے

اس کے حصے
ورنئیرسکیل اور مین سکیل اس کا لیسٹ کاونٹ 0.1 ہے۔

ماس ماپنے کے آلات

Beam Balance

فزیکل بیلنس

لیبارٹری میں یوز ہوتا ہے ۔

کائنی میٹسکس Kinematics

کسی جسم کی موشن سے متلعلق پہلی چیز ہے  اس میں موشن اور اس میں تبدیلی کا جائزہ لیا جاتا ہے ۔

موشن کی اقسام

ٹرانسلیٹری موشن

 جس میں کوئی جسم بغیر گھومے ایک سیدھی لائن میں حرکت کرتا ہے جو سیدھی بھی ہوتی ہے اور دائرہ میں بھی۔

اس کی اقسام

1۔لی نیئر موشن

 کس جسم کی خط مستقیم میں حرکت۔ نیچے گرتے ہوئے بال کی موشن۔

2۔سرکلر موشن

 دائرے میں ڈوری کے ساتھ پتھر باندھ کر گھمانا، یا ٹریک پر کلونا چلانا

3.رینڈم موشن

بے ترتیب حرکت جسے گیس مالیکیولز

4۔روٹیٹری موشن

 کسی جسم کا اپنے ایکسز کے گرد گھومنا  جیسے ویل ، یا لٹو

5۔وائبریٹری موشن

جھولے کی حرکت see saw or to and fro motion

فزکس میں مقداروں مثلا لمبائی ، والیوم ، سپیڈ کو سکہیلر اور ویکٹر میں تقسیم کیا جاتا ہے

سکیلرز  Scalars

ایسی مقداریں جن کا مکمل اظہار ان کی magnitude  سے ہو سکتا ہے، مقدار سے مراد ساتھ مکمل یونٹ کا ہونا بھی ہے جیسے 3.6 کلو گرام، 40s 1.8mکسی بھی سکیلر کو اس کی مقدار سے مکمل طور پر بیان کیا جا سکتاہے جن کے ساتھ سکیل ہی بیان ہو ۔

ویکٹرز مقداریںV

جن کے ساتھ ان کی سمت کا پتہ ہونا بھی ضرور ہے  تب ہم اس کو پوری طرح سمجھ سکتے ہیں اظہار  d کے اوپر تیر یا ڈیش ۔

موشن سے متعلقہ اصطلاحات

فاصلہ اور ڈس پلیسمنٹ

دو پوائنٹس کے درمیان کی راستہ کی  لمبائی  فاصلہ ہےDistance

دو پوائنٹس کے درمیان کم سے کم فاصلہ ڈس پلیسمنٹ  ہے۔

سپیڈ اور ولاسٹی

کسی جسم کی اکائی وقت میں طے کردہ فاصلہ کو سپیڈ کہتے ہیںS=vt

سپیڈ=طے کردہ فاصلہ/وقت

فاصلہ=وقت xسپیڈ

ولاسٹی

 ہمیں سپیڈ اور سمت دونوں بتاتی ہے جس میں کوئی جسم حرکت کر رہا ہوتا ہے ولاسٹی ایک ویکٹر ہے ۔

ولاسٹی=ڈس پلیسمنٹ/وقت

V=d/t and d=vt

ایکسلریشن

کسی جسم میں ولاسٹی میں تبدیلی  کو ایکسلریشن کہا جاتا ہے

ایکسلریشن=ولاسٹی میں تبدیل/وقت

یعنی ابتدائی ولاسٹی تفریق اخری ولاسٹی /وقت

حرکت کی مساواتیں

Vf=vi+at

دوسری مساوات

S=vit+1/2at2

تیسر ی مساوات

Vf2-vi2=2as

ڈائنامکس

اس علم میں ہم موشن کی وجوہات کا بھی مطالعہ کرتے ہیں اس میں نیوٹن کے قوانین بھی اہم ہیں پہلے دیکھیں۔

فورس

فورس کسی جسم کو موشن میں لاتی ہے یا لانے کی کوشش کرتی ہے یا جسم کی موشن کو روکتی یا روکنے کی کوشش کرتی ہے۔

انر شیا Inertia

کسی جسم کی وہ خصوصیت جس کی وجہ سے وہ اپنی ریسٹ پوزیشن یا یونیفارم موشن میں تبدیلی کے خلاف مزاحمت کرتا ہے

مومینٹم Momentum 

کسی جسم میں اس کے ماس اور ولاسٹی کی وجہ سے موشن  کو کہتے ہیں۔

P=mv

نیوٹن کے قوانین

پہلا قانون
اگر کوئی جسم ریسٹ کی حالت میں ہے تو اس وقت تک رہے گا جب تک اس پر کوئی فورس عمل نہ کرے۔

دوسرا قانون

جب ایک فورس کسی جسم پر عمل کرے تو اس میں فورس کی سمت میں ایکسلریشن پیدا ہوتا ہے یہ ایکسلیریشن کی مقدار کے ڈائریکلی پروپورشنل  اور ماس کے انورسلی پروپروشنل ہوتی ہے۔

F=ma

ماس اور وزن

کسی جسم میں مادہ کی مقدار کو اس جسم کا ماس کہتے ہیں۔ یہ ایک سکیلر مقدار ہے جوجگہ تبدیل کرنے سے نہیں بدلتی

وزن وہ فورس ہے جس سے زمین کسی جسم کو اپنی طرف کھینچتی ہے۔

W=mg

Gثقلی اسراع ہے ،

نیوٹن کا تیسرا قانون

ہر ایکشن کا ایک ری ایکشن ہوتا ہے  جو مقدار میں ایکشن کے مساوی مگر سمت میں مخالف ہوتا ہے۔

اس قانون کی روح سے ہر ایکشن کے ساتھ ہمیشہ ایک ری ایکشن کی فورس موجود ہوتی ہے ۔ جیسے میز پر رکھی کتاب ۔کتاب کا وزن نیچے کی سمت میں میز پر عمل کر رہا ہے۔یہ ایکشن ہے میز کا ری ایکشن کتاب پر اوپر کی طرف عمل کررہا ہے ۔

فرکشن

  وہ فورس جو دو سطحوں کے مابین موشن میں مزاحمت پید ا کرتی ہے  یعنی کسی بھی متحرک جسم کو روکنے کے لیے رگڑ یا فرکشن کی قوت یوز ہوتی ہے۔

رولنگ فرکشن

فرکشن کی وجہ سے جسم رول کر سکتا ہے ، جیسے پیہ wheelیعنی گھوم کرآگے کی طرف جاتا جس سے فرکشن میں کمی اور حرکت میں اضافہ ہوتا ہے اس طرح جوں جوں قوت لگائی جائے اس عمل میں تیزی آئ گی۔

سینٹری پیٹل فورس Centripetal Forceوہ فورس جو کسی جسم کو دائرے میں حرکت کرنے پر مجبور کرتی ہے,جیسے سڑک کے موڑ کے کنارے اونچے رکھنا

فورسز کو گھمانے کا اثر

سنٹر آف گریویٹی

 کسی جسم کا سنٹر آف گریویٹی وہ پوائنٹ ہے جہاں اس کا تما م وزن عموداإ نیچے کی جانب عمل کرتا ہو امحسو س ہوتا ہے۔

ایکوی لبریم Equilibrium

کوئی جسم اس وقت تک اس حالت میں رہتا ہے جب تک اس پر کوئی نیٹ فورس عمل نہ کرے۔دیوار پر لگا فریم۔

Stable Equilibrium

کوئی جسم اس حالت میں ہوتا ہے اگرا سے تھوڑا سا اٹھا کر پھر چھوڑا جائے تو واپس پہلی حالت میں آ جا تا ہے۔ جیسے کتاب کا ورق اس لیے چیزوں کا وزن نیچے کی طرف رکھا جاتا ہے جو سنٹر آف گریویٹی بڑھاتا ہے  تاکہ چیزیں سٹیبل رہیں۔

گریوی ٹیشن

آئزک نیوٹن وہ پہلاشخص تھا جس نے گریویٹی کا تصور پیش کیا۔یہ 1665 کی ایک شام تھی جب وہ سیاروں کی سورج کے گرد گردش کا راز جانے کی کوشش کر رہا تھا۔ اس نے سیب کو نیچے گرتے دیکھا اور اس کے ذہن میں گریوی ٹیشن کا قانون ابھرا۔

مصنوعی سیٹلائٹس

کوئی جسم جو سیارے کے گرد گھومتا ہے وہ سیٹلائٹ کہلاتا ہے جیسے چاند زمین کا قدرتی سیٹلائٹ ہے ۔

ورک اور انرجی

جب کسی جسم پر لگائی گئی فورس اسے اس فورس کی سمت میں حرکت دے یہ ورک ہے ۔

انرجی

جب ہم کہتے ہیں کہ کسی جسم میں انرجی ہے اس کا مطلب ہے اس میں کام کرنے کی صلاحیت ہے  کسی جسم کے ورک کرنے کی صلاحیت کو انرجی کہتے ہیں

انرجی کی اقسام

انرجی کو ختم نہیں بلکہ ایک شکل سے دوسری میں بدلا جا سکتا ہے ۔

انرجی کے ذرائع

فوسل فیولز Fossil Fuels

نیو کلر فیولز

پانی سے انرجی

سورج سے

سولر ہائوس سے

پاور

ورک کرنے کی شرح کو پاور کہتے ہیں۔

مادہ کی خصوصیات

کوئی بھی چیز جو وزن رکھے اور جگہ گھیرےمادہ کہلاتی ہے  ۔مادہ زرات سے مل کر بنا ہے جنہیں مالکیولز کہتے ہیں اور یہ مالیکیلوز مسلسل حرکت کرتے ہیں۔

مادہ کی تین حالتیں ہیں ٹھوس، مائع، گیس

ٹھوس Solid چیزیں پتھر ، پنسل

پلازما

مادہ کی چوتھی حالت ہے

ڈینسٹی

کسی جسم کے یونٹ والیوم کا ماس۔

ڈینسٹی=شے کا ماس /شے کا والیوم

مادہ کے حرارتی اثرات

کسی جسم کے ٹھنڈا یا گرم ہونے کی شدت کو ٹمپریچر کہتے ہیں۔

رفریکشن

جب روشنی کی شعاع ایک شفاف میڈیم سے دوسرے میڈیم میں داخل ہوتی ہے تو اپنا راستہ تبدیل کر لیتی ہے۔اسے رفریکشن کہتے ہیں۔

آواز

آواز انرجی کی ایک شکل ہے جو کسی جسم کے وائبریٹ کرنے سے پیدا ہوتی ہےاور آواز کو دیکھا یا محسوس کیا جا سکتاہے۔

کسی چیز سے آواز اس وقت پیدا ہوتی ہے جب وہ وائبریٹ کرے۔

آواز کی سماعت کا احساس ہمیں کانوں کی مدد سے ہوتا ہے۔

کان کے حصے

بیرونی کان، اندرونی کان، وسطی کان

آواز کی خصوصیات

اگر کسی جسم میں پیدا ہونے والی وائبریشز کا ایمپلی ٹیوڈ زیاہو تو اس کی آواز بھی بلند ہوتی ہے

آواز کی پچ

وہ خاصیت جس سے بھاری اور باریک آواز میں فرق محسوس کیا جا سکتاہےاسکا انحصار فریکونسی پر ہوتا ہے جتنی فریکونسی زیادہ ہو گی پچ بھی زیادہ ہوگی۔ عورتوں اور بچوں کی آواز کی فریکونسی زیادہ ہوتی ہے

ایک نارمل آنکھ 25سنٹی میٹر تک دور پڑے اجسام کو آسانی سے دیکھ سکتی ہے۔لیکن کچھ لوگوں کے لیے ایسا ممکن نہیں ہے۔اس میں کچھ لوگ قریب نظری Short Sightedness جس میں دور کی چیزیں  نہیں صاف لیکن نزدیک کی چیزیں صاف نظر آتی۔

بعید نظری میں قریب کی اشیا صاف، مگر دور کی صاف نظر نہیں آتی۔

گیلوانو میٹر کسی جسم میں کرنٹ کا بہائو چیک کرنے کے لیے استعما ل ہوتا ہےکہ کرنٹ ہے یا نہیں

انفارمیشن ٹیکنالوجی

معلومات کو ذخیرہ کرنے ، ان کو ترتیب دینے، ان کو درست استعمال میں لانے اور دوسروں تک پہنچانے کے سائنسی طریقہ کار کو کہتے ہیں