گولڑہ ریلوئے اسٹیشن کی تاریخی اہمیت


پاکستان کے دارالحکومت  اسلام آباد  کے مضافات میں قائم گولڑہ ریلوئے اسٹیشن برطانوی دور حکومت میں انگریزوں نے 1882ء میں تعمیر کروایا تھا۔ پاکستان کا یہ واحد ریلوئے اسٹیشن ہے جو کہ تاریخی اہمیت کا حامل ہے۔ اسی طرح یہ سو سال پرانے ماضی جھلک بھی پیش کرتا ہے۔ یہ ریلوئے اسٹیشن آنے والے مسافروں، سیّاحوں کا استقبال برطانوں دورِ حکومت  میں لگائے گئے 150 سال پرانے برگد کے درختوں کے دلکش نظاروں، بھاپ سے چلنے والے انجنوں، ایک نایاب اور چھوٹی سی وکٹوریہ انداز میں بنائی گئی عمارت اور پُرسکون ماحول کے ساتھ کرتا ہے۔

گولڑہ ریلوئے اسٹیشن قیام 1882ء میں برطانوں دورِ حکومت میں ہوا اور اس کا جنکشن (ایسا پوائنٹ جہاں دو یا دو سے زیادہ ترینیں آپس میں ملتی ہیں) 1912ء میں اَپ گریڈ کیا گیا۔ گولڑی ریلوئے اسٹیشن کی ایک خاص بات یہ بھی ہے کہ یہ اسٹیشن افغانی فوجی مہم کے دوران برطانوی لاجسٹکس کا حصہ تھا جس کے بعد یہ ریلوئے اسٹیشن ایک اہم تجارتی راستہ بھی بن گیا۔